جمعہ، 30 اکتوبر، 2015

کتاب فضائل اعمال اور فضائل درود اور بریلوی اعتراض کا جواب

کتاب فضائل اعمال اور فضائل درود
بریلوی اعتراض کا جواب

حیرت ہوتی ہے عقل سے یتیم رضاخانیوں پر اپنے گھر کی تلاشی لئے بغیر دوسروں پر تنقید اور اعتراض کردیتے ہیں۔لیکن رضاخانیوں کو اپنے گھر کا گند دکھائی نہیں دیتا۔بہرحال ان سے گلا بھی کیسا انکا تو پیشہ ہی یہی رہا ہے۔
حضرت مولانا شیخ زکریا کاندھلویؒ نے تبلیغی نصاب کے لئے کُل چار کتابیں لکھیں فضائل اعمال(جس میں مخصوص اعمال کے فضائل ہیں)،فضائل صدقات،حکایاتِ صحابہ اور فضائلِ درود شریف۔جوں جوں آپ کتاب لکھتے گئے چاروں کتابیں الگ الگ شائع ہوتی گئیں۔بعض مکتبوں نے الگ الگ ہی کتابیں شائع کیں اور بعض نے تمام نصاب کو یکجا کردیا۔یعنی کسی باب کو نکالا نہیں. جس طرح شیخؒ نے وقتاً فوقتاً کتابیں لکھیں ویسے ہی شائع ہوتی گئیں۔جس طرح فضائل صدقات،حکایتِ صحابہ الگ کتابی صورت میں دستاب ہے ویسے ہی فضائل درود کی جامع ترین کتاب بھی الگ کتابی صورت میں دستاب ہے۔جبکہ پوری دنیا میں اب بھی فضائل درود شریف کے ساتھ فضائل اعمال چھپ رہی ہے۔ بعض جماعتیں اپنے ساتھ چاروں کتابیں لے کر چلتی ہیں یا کبھی صرف فضائل اعمال ہی رکھ لیتی ہیں۔اگر کہیں کسی ملک میں چاروں نصابی کتب الگ الگ شائع ہورہی ہوں تو کوئی اسکا مطلب یہ نہیں لے گا کہ تبلیغ والے صحابہ کرام، اور صدقہ کے فضائل کے منکر ہیں۔اسی طرح اگر کہیں فضائلِ درود فضائل اعمال میں شامل نہ ہو تو پوری تبلیغی جماعت کو گستاخِ رسول ﷺ اور درود کا منکر ٹھہرانا اور طرح طرح کے فتوٰے لگانا انتہائی درجہ کا تعصب ہے۔
رہا رضاخانیوں کا اس پر شور شرابا کرنا تو ان کو شرم آنا چاہیے۔جن کے ہاں درود ابراہیمی نماز کے علاوہ پڑھنا ناجائز اور گناہ ہو۔(تفسیرِ نعیمی،جلد 16 صفحہ 110،نعیمی کتب خانہ)، جن کے ہاں درود کی یہ حیثیت ہو کہ اپنے اکابر کے نام پر درود بنائے جارہے ہوں۔(شجرہ طیبہ،محمد ریحان رضا خان قادری)۔
جن کے اعلیٰ حضرت نے 70 کتابیں تو صرف علماء اہل سنت دیوبند اور وہابیوں کے خلاف لکھی ہوں لیکن اپنی ساری زندگی میں کبھی ایک کتاب بھی درود شریف کے فضائل پر نہیں لکھی ہو۔اس کے برعکس علماء دیوبند میں سے مولانا اشرف علی تھانویؒ،مولانا زکریا َ،مولانا یوسف لدھیانویؒ اور بہت سے سینکڑوں علماء نے فضائلِ درود پر کتابیں لکھیں۔
اسکے علاوہ جو حضرات جماعت میں جاتے رہتے ہیں ان کا تجربہ ہوگا کہ اکثر بیان شروع کرنے سے پہلے ہی کہا جاتا ہے کہ سب درود شریف پڑھ لیں اور چھہ نمبر کے بیان میں فضائل ذکر میں درود شریف کی تسبیح پڑھنے کی بھی ترغیب دی جاتی ہے۔
اب ہم عقل سے پیدل بریلوی بھائیوں کے لئے دعا ہی کرسکتے ہیں کہ اللہ انہیں عقل سلیم عطا فرمائے۔آمین

0 تبصرے:

اگر ممکن ہے تو اپنا تبصرہ تحریر کریں

اہم اطلاع :- غیر متعلق,غیر اخلاقی اور ذاتیات پر مبنی تبصرہ سے پرہیز کیجئے, مصنف ایسا تبصرہ حذف کرنے کا حق رکھتا ہے نیز مصنف کا مبصر کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

نوٹ: اس بلاگ کا صرف ممبر ہی تبصرہ شائع کرسکتا ہے۔